هفته,  18 مئی 2024ء
پاکستانی نوجوانوں کی بڑی تعداد خراب حالات کے باوجود ملک میں رہنے کی خواہشمند ،سروے رپورٹ سامنے آ گئی

اسلام آباد(نیوزڈیسک)میڈیا رپورٹس کے مطابق پاکستانی نوجوانوں کی اکثریت بیرون ملک نہیں جانا چاہتی بہت سے لوگوں نے مغربی ریاستوں کے مقابلے خلیجی ممالک جانے کو ترجیح دی ۔ نئے سروے میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ پاکستانی نوجوانوں کے ایک بڑے حصے نے معاشی حالات خراب ہونے کے باوجود اپنے ملک میں رہنے کو ترجیح دی ہے۔وائس آف امریکہ یوتھ سروے کے مطابق، وہ بیرون ملک نہیں جانا چاہتے۔ 18 سے 34 سال کی عمر کے نوجوانوں کے ایک گروپ سے پوچھا گیا کہ کیا وہ کسی غیر ملک میں شفٹ ہونا چاہتے ہیں۔

ہر چار میں سے تین نے نفی میں جواب دیا اور پاکستان میں رہنے کو ترجیح دی۔صرف 23% نوجوانوں نے غیر ملک جانے کا ارادہ ظاہر کیا۔ ان کا تعلق 18 سے 24 سال کے گروپ سے تھا اور وہ لوگ جو روزگار کے بہتر مواقع تلاش کر رہے تھے۔عمر کے گروپ، جس میں یونیورسٹی کے طلباء اور نئے گریجویٹس شامل ہیں، نے اعلیٰ تعلیم کے حصول کے لیے بیرون ملک تعلیم حاصل کرنے کی خواہش ظاہر کی تھی۔ اسی طرح تنخواہ دار لوگ معیاری زندگی گزارنا چاہتے تھے۔سروے کے مطابق شہری علاقوں میں 29 فیصد نوجوان جبکہ دیہی علاقوں میں 18 فیصد نوجوانوں نے کہا کہ وہ ملک چھوڑنا چاہتے ہیں۔

وہ یورپ یا امریکہ جانے کے بجائے سعودی عرب جانا چاہتے تھے۔ اکتالیس فیصد نے بادشاہی جانے کو ترجیح دی۔کینیڈا جواب دہندگان کا دوسرا آپشن تھا جبکہ صرف چار فیصد جواب دہندگان نے کہا کہ وہ امریکہ جانا چاہتے ہیں۔دلچسپ بات یہ ہے کہ نئے ملک میں منتقل ہونے کا ارادہ کرنے والے نوجوانوں کی سب سے کم تعداد بلوچستان میں تھی۔NC سالیسیٹرز کے چیف ایگزیکٹیو آفیسر نعمان چٹھہ نے کہا کہ سعودی عرب کو منتخب کرنے کی ایک بڑی وجہ مشترکہ مذہب اور روزگار کے بہتر مواقع ہوں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ زیادہ تر طلباء کا خیال ہے کہ آسٹریلیا اور کینیڈا بہتر ملازمتیں، تعلیم اور معیار زندگی فراہم کر سکتے ہیں۔لاہور میں قائم کنسلٹنٹ ایجنسی کے سربراہ نے مزید کہا کہ مغربی ممالک کا انتخاب نہ کرنے کی وجہ ثقافت اور مذہب ہو سکتا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ سعودی عرب جانا ان لوگوں کے لیے بڑا سودا ہو سکتا ہے جو کبھی بیرون ملک نہیں رہے۔

پاکستان اوورسیز ایمپلائمنٹ پروموٹرز ایسوسی ایشن کے ترجمان عدنان پراچہ نے کہا کہ 22 سے 35 سال کی عمر کے پاکستانی خلیجی ممالک کا دورہ کرنے کو ترجیح دیتے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ ایسے ممالک کا دورہ کرنا یورپی ریاستوں میں جانے سے زیادہ آسان ہے۔بیورو آف امیگریشن اینڈ اوورسیز ایمپلائمنٹ کے مطابق، 2023 میں 860,000 پاکستانی ملازمتوں کے لیے بیرون ملک گئے۔ اس نے مزید کہا کہ کل میں سے تقریباً 426,951 سعودی عرب گئے۔

مزید خبریں

FOLLOW US

Copyright © 2024 Roshan Pakistan News