منگل,  23 جولائی 2024ء
برطانیہ کے عام انتخابات میں اپوزیشن جماعت لیبرپارٹی نے میدان مارلیا

لندن(صبیح زونیر)برطانوی پارلیمانی انتخابات کے سلسلے میں پولنگ کا وقت ختم ہوجانے کے بعد ووٹوں کی گنتی کا عمل جاری ہے۔

ووٹنگ کا وقت ختم ہوتے ہی ایگزٹ پول جاری کردیا گیا، جس کے مطابق لیبر پارٹی کو برتری حاصل ہے۔

اب تک کے نتائج کے مطابق ٹوٹل 650 نشستوں میں سے 585 کے حتمی نتائج آگئے۔

جن کے مطابق لیبر پارٹی390، کنزرویٹو 99،  لب ڈیم 58 نشستیں اور ریفارم 3 نشستیں لے سکی جبکہ دیگر جماعتیں 8 نشستوں پر کامیاب قرار دی گئی ہیں۔

قبل ازیں برطانوی انتخابات میں پولنگ کا وقت ختم ہونے کے بعد برطانوی میڈیا کی جانب سے جاری پہلے نتیجے میں سنڈر لینڈ ساؤتھ سے لیبر پارٹی کی بریجٹ فلپسن کو کامیابی ملی تھی۔

ووٹنگ ختم ہوتے ہی ایگزٹ پول جاری، لیبر پارٹی کو برتری حاصل

ووٹنگ ختم ہوتے ہی ایگزٹ پول جاری کردیا گیا، جس کے مطابق لیبر پارٹی کو برتری حاصل ہے۔

لیبر پارٹی کو 410 اور کنزرویٹو پارٹی کو 131 نشستوں پر کامیابی کی توقع ہے۔

ایگزٹ پولز کے مطابق کنزرویٹوز کا 14 سالہ دور ختم ہوا۔

 

ایگزٹ پولز نے ممکنہ نتائج کی پیش گوئی کردی ہے، جس کے مطابق لیبر پارٹی کو 410 نشستیں، کنزرویٹو کو 131 نشستیں ملیں گی۔

پولز کے مطابق لب ڈیم کو 61، ریفارمز کو 13 نشستیں، ایس این پی کو 10، گرین پارٹی کو 2 اور دیگر کو 23 نشستیں ملیں گی۔

ایگزٹ پول کے مطابق لیبر پارٹی کو 209 نئی نشستیں ملیں گی، کنزرویٹو پارٹی 241، ایس این پی 38 نشستوں سے محروم ہوگی جبکہ لب ڈیم کو 53، ریفارم کو 13 اور گرین کو ایک نئی نشست ملے گی۔

وزیراعظم رشی سونک کی طرف سے 22 مئی کو ملک میں 4 جولائی کو عام انتخابات کروانے کے اعلان کے بعد تقریباً چھ ہفتوں کی انتخابی مہم کے بعد آج ووٹنگ ہوئی جو پاکستانی وقت کے مطابق تقریباً دو بجے تک جاری رہی۔

پارلیمنٹ کی 650 نشستوں کیلئے ساڑھے چار ہزار سے زائد امیدوار ہیں، کام یابی کیلئے کسی بھی پارٹی کو 50 فیصد یعنی 326 نشستیں درکار ہیں۔

کوئی پارٹی سادہ اکثریت حاصل نہ کر پائی تو پارلیمنٹ معلق ہوگی، اتحادی حکومت بنانا پڑے گی، 9 جولائی کو پارلیمنٹ کے اجلاس میں نو منتخب ارکان حلف اُٹھائیں گے۔

عام انتخابات میں پارلیمنٹ کی 650 نشستوں کے لیے ساڑھے 4 ہزار سے زائد امیدوار انتخابی دنگل میں اُترے۔ تاہم لیبر پارٹی اور کنزرویٹو پارٹی کے درمیان کڑے مقابلے کی توقع کی جارہی ہے۔

ملک بھر میں تقریباً 50 ملین ووٹرز اپنا حق رائے دہی استعمال کرنے کے اہل ہیں، ووٹنگ کے لیے 40 ہزار سے زائد پولنگ اسٹیشنز قائم کیے گئے۔

پولنگ کا سلسلہ برطانوی وقت کے مطابق صبح 7 بجے سے شروع ہوا جو رات 10 بجے تک بلا تعطل جاری رہا۔ برطانیہ میں عموماً کام پر جانے والے اکثر افراد صبح ہی ووٹ ڈال کر فارغ ہوجاتے ہیں جبکہ دن میں ریٹائرڈ افراد اور گھریلو خواتین ووٹ ڈالنے کے لیے پولنگ اسٹیشنز کا رُخ کرتے ہیں۔

ووٹرز کیلئے تصویری شناخت دکھانا لازمی ہے، مئی میں بلدیاتی انتخابات کے موقع پر سابق وزیراعظم بورس جانسن کو ووٹ ڈالنے کےلیے تصویری شناخت ہمراہ نہ لانے پر واپس گھر لوٹنا پڑا تھا۔

مزید خبریں

FOLLOW US

Copyright © 2024 Roshan Pakistan News