هفته,  13 جولائی 2024ء
وکی لیکس کے بانی جولین اسانج عدالت سے رہائی کا حکم سنائے جانے پر آسٹریلیا روانہ

لندن(روشن پاکستان نیوز)وکی لیکس کے ذریعے پوری دنیا میں تہلکہ مچانے اور حکومتوں کا دھڑن تختہ کرانے والے جولین اسانج آزاد شہری کی حیثیت سے آسٹریلیا سے روانہ ہوگئے ہیں کیونکہ امریکی محکمہ انصاف نے انہیں ملک میں داخل ہونے سے روک دیا تھا۔

جولین اسانج کے خلاف کم و بیش ایک عشرے سے جاری مقدمہ اب اختتام کو پہنچا ہے۔ سائپان کی عدالت میں سماعت کے دوران جولین اسانج نے امریکی فوج کے راز منظرِ عام پر لانے کے ایک معاملے میں غلطی تسلیم کی۔

جج ریمونا ط مینگلونا نے جیل میں گزارے گئے وقت ہی کو سزا میں شمار کیا۔ جج کے مطابق جیل میں گزارے ہوئے 62 ماہ کافی ہیں۔

عدالتی کارروائی سائپان میں کی گئی جو بحرالکاہل میں امریکی کامن ویلتھ کے ایک جُز شمالی میریانہ کا دارالحکومت ہے۔

اس عدالت میں پیشی کے لیے جولین اسانج کو لندن سے بنکاک کے راستے سائپان لایا گیا تھا۔ جولین اسانج کی اہلیہ اسٹیلا نے برطانوی خبر رساں ادارے کو بتایا تھا کہ وہ اپنا قصور تسلیم کرتے ہوئے معافی مانگ لیں گے۔ معافی ملنے کی صورت میں وہ مستقبل میں امریکا واپس جاسکیں گے۔ عدالت میں امریکا کے لیے آسٹریلوی سفیر کیوِن رَڈ اور برطانیہ کے لیے آسٹریلوی ہائی کمشنر بھی جولین اسانج کے ساتھ تھے۔

مزید خبریں

FOLLOW US

Copyright © 2024 Roshan Pakistan News