اردوزبان کے نفاز کے حوالے سے منعقدہ تقریب میں صحافیوں اور وکلاء میں شیلڈز تقسیم کی گئیں۔

اسلام اباد (سٹی رپورٹر )آوا کے تحت اردو زبان کے نفاذ کے لیے تقریب میں صحافیوں اور وکلاء کو شیلڈز دی گئی ہیں تقریب ایف ایٹ شہداء حال میں منعقد ہوئی اس تحریک کے روح رواں عبدالرؤف چوہدری ایڈووکیٹ نے کہا کہ ایک ان پڑھ اور انگریزی نہ سمجھنے والے کو انگریزی میں لیٹر لکھ کر امتحان میں ڈال دیا جاتا ہے پھر وہ انگریزی سمجھنے والے کو ڈھونڈ کر اس حکومتی خط یا عدالتی فیصلے کا ترجمہ کراتا ہے جبکہ ہماری قومی زبان اردو ہے 1973 کے آئین میں کہا گیا تھا کہ 15 سال کے اندر اندر اردو زبان پاکستان میں نافذ ہو جائے گی لیکن 48 سال گزر گئے یہ نہ ہوسکا پھر جسٹس جواد ایس خواجہ نے بطور چیف جسٹس اس پر عملدرآمد کے حوالے سے تفصیلی فیصلہ جاری کیا لیکن تاحال عملدار نہیں ہوسکا۔تقریب میں چوہدری اشرف گجر ایڈووکیٹ،راجہ زاہد محمود ایڈووکیٹ صدر ہائیکورٹ بار،طلعت محمود ایڈووکیٹ،ظفر کھوکھر ایڈووکیٹ،فضل الرحمان ایڈووکیٹ،حسیب چوہدری ایڈووکیٹ و دیگر وکلاء اور صحافیوں نے شرکت کی۔مقررین نے اردو زبان کے نفاذ کے راستے میں رکاوٹیں ختم کرکے حکومت کو سنجیدہ اقدامات اٹھانے ہوں گے ملک میں ایک بڑی تعداد انگریزی زبان کی وجہ سے تعلیم سے دور رہ جاتی ہے ان کا کیا قصور ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں