مری اپر جھیکا گلی قبضہ مافیا کی کارستانیاں ہوٹل پر قبضہ اور اصل مالک کو زندگی سے ہاتھ دھونے کی دھمکیاں

اسلام آباد(سدھیراحمد) چیئرمین پرواز ہیومن رائٹس آرگنائزیشن آف پاکستان مخدوم ایم نیاز انقلابی ایڈووکیٹ نے کہا ہے کہ مری کے لوکل قبضہ مافیاء نے انکے موکل محمد طاہرولد نصراللہ خان کے ملکیتی اپر جھیکا گلی میں واقع نصراللہ ہوٹل پردھوکہ دہی اور دھونس دھاندلی کے ذریعے قبضہ کر لیا ہے، قبضہ مافیاء کے سرغنہ راشد عباسی اور طارق فراز محمد طاہر کو قانونی کارروائی کرنےپرجان سے مارنے کی دھمکیاں دے رہے ہیں،انہوں نے وزیر اعلیٰ پنجاب ، سی پی او راولپنڈی سے مطالبہ کیا کہ واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے انکے ہوٹل کا قبضہ واگزار کرواکر اسے سیل کیا جائے اور قبضہ مافیاء طارق فرازاور راشد عباسی سےتحفظ فراہم کیا جائے اور انہیں قرار واقعی سزا دی جائے، انہوں نے ان خیالا ت کا اظہار اپنے موکل اور نصر اللہ ہوٹل کے مالک محمد طاہر کے ہمراہ نیشنل پریس کلب اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا، مخدوم ایم نیاز انقلابی ایڈووکیٹ کا مزید کہنا تھا کہ انکے موکل محمد طاہر ولد نصراللہ خان جو کہ کراچی کے رہائشی ہیںاور اپر جھیکا گلی میں نصراللہ ہوٹل کے مالک ہیں نے طارق فراز اور راشد عباسی سے نصراللہ ہوٹل مبلغ چودہ کروڑ روپے میں فروخت کرنے کا معاہدہ کیا جنہوں نے انہیں پانچ لاکھ روپے زربیعانہ ادا کیا جبکہ بقایا رقم جو کہ مبلغ12 کروڑ پچانوے لاکھ روپےپندرہ ستمبر 2022ء تک ادائیگی کا وعدہ کیا تاہم طارق فراز نے اپنے آپ کو بچانے کیلئے راشد عباسی کو آگے کر دیا اور کہا کہ اب آپکا معاہدہ راشد عباسی کیساتھ ہے مورخہ 12 ستمبر 2022ء کو راشد عباسی نے ایک کروڑ روپیہ بذریعہ چیک نمبری 77600356 مورخہ 05 ستمبر 2022ء دیا اور وعدہ کیا کہ وہ بقایا رقم مبلغ 12 کروڑ پچانوے لاکھ مقررہ تاریخ 15 ستمبر 2022ء تک ادا کر دیگا تاہم اس دوران انہوں نے ہوٹل ہتھیانے کیلئے ساز باز شروع کر دی، اس دوران راشد عباسی نے فون کرکے کہا کہ اسکا سوات میں واقع ہنی مون ہوٹل سیلاب سے تباہ ہو گیا ہے جس سے اسے شدید مالی نقصان ہوا ہے،راشد عباسی نے کہا کہ آپ ہوٹل کے کاغذات تیار کروائیںجس پر محمد طاہر نے اسے بقایا رقم کا بینک ڈرافت تیار کرانے گا کہا،بعد میں پتہ چلا کہ راشد عباسی نے جھوٹ اور دروغ گوئی سے کام لیا ہے اور ہنی مون ہوٹل سوات اسکی ملکیت نہیں تھا،طارق فراز اور راشد عباسی نے دیگر نامعلوم ملزمان کیساتھ ملکر جعلی اسٹام اور پیپرز تایار کئے اور باقاعدہ منصوبہ بندی سے 23 ستمبر کو ہوٹل پر غنڈوں کے ذریعے قبضہ کر لیا اور ہوٹل کے عملے کو یرغمال بنا لیا، ملزمان نے غیر قانونی طور پر ہوٹل کا نام تبدیل کرکے اسے مسیاڑی گیسٹ ہاؤس کا نام دیدیا ہے،انہوں نے مطالبہ کیا کہ انکے سائل کو انصاف فراہم کیا جائے اور انکے ہوٹل پر مری کی مقامی پویس کی مدد سے ہونے والاناجائز اور غیر قانونی قبضہ واگزار کروایا جائے اور واقعہ میں ملوث ملزمان کو کیفر کردار تک پہنچایا جائے، اس موقع پر نصراللہ ہوٹل کے مالک محمد طاہر کا کہنا تھا کہ قبضہ مافیاء طارق فراز اور راشد عباسی قانونی کارروئی پر انہیں اور انکے خاندان کے دیگر افراد کو جان سے مارنے کی دھمکیان دے رہے ہیں انہوں نے وزیراعظم، وزیر اعلیٰ پنجاب، وفاقی وزیر داخلہ اور سی پی او راولپنڈی سے مطالبہ کیا کہ انہیں انکی پراپرٹی واگزار کروا کر دی جائے اور انہیںقبضہ مافیاء سے تحفظ فراہم کرتے ہوئے ملزمان کو کیفر کردار تک پہنچایا جائے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں